ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے
اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


جمعرات، 10 مارچ، 2016

کچھ تو ہم بھی کسی گمان میں تھے / اور کچھ یاد بھی نہ آئے تم ۔۔ افتخار شفیع

افتخار شفیع
اتنے برسوں کے بعد آئے تم
اب بھی لگتے نہیں پرائے تم
ایک ملبوس کے بدلنے سے
کتنے رنگوں میں جھلملائے تم
بنسری بج رہی تھی دور کہیں
رات کس درجہ یاد آئے تم

دل کو اک ضرب یاد ہے اب بھی
کتنے اچھے لگے تھے ہائے! تم
ایک شاخِ یمینِ گُل کے لئے
کن درختوں پہ چہچہائے تم
کچھ تو ہم بھی کسی گمان میں تھے
اور کچھ یاد بھی نہ آئے تم
رات مجلس میں ایک رونق تھی
آ رہے تھے سجے سجائے تم

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں