ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

ہفتہ، 23 مئی، 2015

ﺑﻮﻝ ﺍﻧﻤﻮﻝ۔۔ ﻣﺠﯿﺪ ﺍﻣﺠﺪ

مجید امجد
ﺍﺏ ﯾﮧ ﻣﺴﺎﻓﺖ ﮐﯿﺴﮯ ﻃﮯ ﮬﻮ، ﺍﮮ ﺩﻝ، ﺗﻮُ ﮬﯽ ﺑﺘﺎ
ﮐﭩﺘﯽ ﻋُﻤﺮ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﭩﺘﮯ ﻓﺎﺻﻠﮯ، ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻭﮬﯽ ﺻﺤﺮﺍ
ﭼﯿﺖ ﺁﯾﺎ، ﭼﯿﺘﺎﺅﻧﯽ ﺑﮭﯿﺠﯽ، ﺍﭘﻨﺎ ﻭﭼﻦ ﻧﺒﮭﺎ
ﭘﺖ ﺟﮭﮍ ﺁﺋﯽ، ﭘﺘﺮ ﻟﮑﮭﮯ۔۔۔۔۔۔۔ﺁ! ﺟﯿﻮﻥ ﺑﯿﺖ ﭼﻼ
ﺧﻮﺷﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﻣُﮑﮫ ﭼُﻮﻡ ﮐﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺩُﻧﯿﺎ ﻣﺎﻥ ﺑﮭﺮﯼ
ﺩﮐﮫ ﻭﮦ ﺳﺠﻦ ﮐﭩﮭﻮﺭ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﻮ ﺭﻭُﺡ ﮐﺮﮮ ﺳﺠﺪﺍ
ﺍﭘﻨﺎ ﭘﯿﮑﺮ، ﺍﭘﻨﺎ ﺳﺎﯾﮧ، ﮐﺎﻟﮯ ﮐﻮﺱ ﮐﭩﮭﻦ
ﺩُﻭﺭﯼ ﮐﯽ ﺟﺐ ﺳﻨﮕﺖ ﭨﻮُﭨﯽ، ﮐﻮﺋﯽ ﻗﺮﯾﺐ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ
ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺯﻣﺎﻧﮧ، ﺁﻣﻨﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮬﻢ
ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﺑﻨﺪﮬﻦ، ﺟﺴﻢ ﺳﮯ ﺟﺴﻢ ﺟُﺪﺍ
ﺍﭘﻨﮯ ﮔِﺮﺩ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﻣﯿﮟ ﮔُﮭﻠﺘﯽ ﺳﻮﭺ ﺑَﮭﻠﯽ
ﮐِﺲ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺴﮯ ﺩﺷﻤﻦ! ﺳﺐ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﻟﯿﺎ
ﺭﺍﮬﯿﮟ ﺩﮬﮍﮐﯿﮟ، ﺷﺎﺧﯿﮟ ﮐﮍﮐﯿﮟ، ﺍِﮎ ﺍِﮎ ﭨﯿﺲ ﺍَﭨﻞ
ﮐﺘﻨﯽ ﺗﯿﺰ ﭼﻠﯽ ﮬﮯ ﺍﺏ ﮐﮯ ﺩﮬُﻮﻝ ﺑﮭﺮﯼ ﺩُﮐﮭﻨﺎ
ﺩُﮐﮭﮍﮮ ﮐﮩﺘﮯ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﻣُﮑﮭﮍﮮ، ﮐِﺲ ﮐِﺲ ﮐﯽ ﺳُﻨﯿﮯ
ﺑﻮﻟﯽ ﺗﻮ ﺍِﮎ ﺍِﮎ ﮐﯽ ﻭﯾﺴﯽ، ﺑﺎﻧﯽ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺟُﺪﺍ

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں