ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

جمعرات، 9 اکتوبر، 2014

چھپا تھا سطرِ مبہم میں معانی کا خزانہ ۔۔ اعجاز گل

اعجاز گل
خرابی مُدّعا میں سب وضاحت سے ہوئی ہے
فضا انکار کی پیدا طوالت سے ہوئی ہے
خموشی تھی اُدھر جب تک کہاں میں بولتا تھا
مجھے جراؑت شکایت کی شکایت سے ہوئی ہے
خبر ہے غیبتِ دیگر ہے معمولاتِ دنیا
یہ بیزاری تو روزانہ سماعت سے ہوئی ہے
لکھا ہے داخلہ ممنوع دروازے پہ لیکن
کوئی آمد کہاں میری اجازت سے ہوئی ہے
نکالی اپنے اندر سے پہیلی نے پہیلی
سمجھ تازہ بجھارت کی بجھارت سے ہوئی ہے
چھپا تھا سطرِ مبہم میں معانی کا خزانہ
عیاں صدیوں کی دانائی کہاوت سے ہوئی ہے
نہ کار آمد رہی ہے گفتگوئے باالمشافہ
نہ کچھ امید افزائی وساطت سے ہوئی ہے
نہیں آئی قیامت بھی کہ حل ہوتا معمہ
نہ ظاہر بات ہی ردِّ قیامت سے ہوئی ہے
تدّبر اس میں شامل ہے کوئی کُن کے سوا بھی
یہ تعمیرِ جہاں ایسے مہارت سے ہوئی ہے
کرشمہ ایک عنصر کا نہیں ، تشکیل میری
کئی اجزا کی آپس میں شراکت سے ہوئی ہے

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں