ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

سوموار، 8 ستمبر، 2014

کہتے ہیں کوئی رات سے اس در پہ کھڑا تھا ۔۔ حمیدہ شاھین

حمیدہ شاھین
کہتے ہیں ستارے کہ گہن آن  پڑ اتھا.
 کہتے ہیں وہاں چاند اکیلا ہی لڑا تھا
 کہتے ہیں کہ دہلیز پہ سورج نکل آیا
کہتے ہیں کوئی رات سے اس در پہ کھڑا تھا
کہتے ہیں کوئی مؔیر دمکتا ہے ابھی تک
کہتے ہیں انگوٹھی میں نگینہ سا جڑاتھا
کہتے ہیں سدا بات جو کرتا رہا چھوٹی 
کہتے ہیں کہ اس کا بھی یہاں نام بڑا تھا
 کہتے ہیں  کوئی کیسری چوغے میں تھا ملبوس
کہتے ہیں کلائی میں مرے جیسا کڑا تھا
 کہتے ہیں کوئی میرے ترازو میں پڑا ہے
کہتے ہیں وہ کل تک مرے دشمن کا دھڑا تھا

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں