اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


ہفتہ، 31 مئی، 2014

ذوالفقار نقوی کی غزل

ﻣﻮﺝ ﻣﯿﺮﯼ ﺫﺍﺕ ﮐﯽ ﻗﺎﺋﻞ ﮐﮩﺎﮞ
ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺳﺎﺣﻞ ﮐﮩﺎﮞ
ﻭﮦ ﻣﺮﯼ ﮔﻠﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﺬﺭﺍ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ
ﻣﯿﺮﮮ ﮐﺮﺏ ﻭ ﺩﺭﺩ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﮩﺎﮞ
"ﻧﺮﮔﺴﯿﺖ" ﭼﮭﻠﻨﯽ ﭼﮭﻠﻨﯽ ﮐﺮ ﮔﺌﯽ
ﺗﯿﺮﺍ ﺳﯿﻨﮧ ﭘﯿﺎﺭ ﮐﮯ ﻗﺎ ﺑﻞ ﮐﮩﺎﮞ
ﺍﭨﮫ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﺷﻮﺭ ﻟﻔﻈﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮩﻢ
ﺑﮭﺎﮔﺘﺎ ﮨﮯ ﻓﮑﺮ ﮐﺎ ﻗﺎﺗﻞ ﮐﮩﺎﮞ
ﻣﯿﺮﮮ ﺣﺼﮯ ﭘﺮ ﻭﮦ ﻗﺎﺑﺾ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ
ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﮐﮩﺎﮞ


1 تبصرہ:

  1. محترم صدیقی صاحب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہت بہت شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔ اس طالب علم کو آپ نے عزت بخشی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ در اصل یہ غزل "اُجالوں کا سفر" مجموعہ ء کلام میں نہیں ہے ۔۔۔ اس مجموعے میں دسمبر ۲۰۱۲ تک کا کلام شائع ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ یہ غزل بعد کی ہے ۔۔۔۔۔ خیر ۔۔۔۔
    اللہ آپ کی توفیقات میں اضافہ کرے ۔۔۔۔۔ آمین
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بندہ ناچیز ۔۔۔ ذوالفقار نقوی

    جواب دیںحذف کریں