ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے
اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


اتوار، 18 جنوری، 2015

اس نے دل باندھ کے اک آن میں بازی جیتی۔۔۔ ھم تو سمجھے تھے فقط ایک پیادہ باندھا ۔۔شہزاد نیئر

شہزاد نیئر
جب بھی چُپکے سے نکلنے کا ارادہ باندھا
مجھ کو حالات نے پہلے سے زیادہ باندھا
چلتے پھرتے اسے بندش کا گماں تک نہ رھے
اُس نے انسان کو اس درجہ کشادہ باندھا
کتنی بھی تیز ھوئی حِرص و ھوس کی آندھی
ھم نے اک تار ِ توکل سے لبادہ باندھا
یک بہ یک جلوہء تازہ نے قدم روک لئے
میں نے جس آن پلٹنے کا ارادہ باندھا
تو نے سامان میں جب باندھ ھی دی تھی منزل
کس لئے یار مرے پاؤں میں جادہ باندھا
اس نے دل باندھ کے اک آن میں بازی جیتی
ھم تو سمجھے تھے فقط ایک پیادہ باندھا
سادگی حسن کی شعروں میں بیاں کرنی تھی
لفظ آسان چُنے ، مصرعہء سادہ باندھا "

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں