اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


منگل، 6 فروری، 2018

ایک ادھوری نظم ۔۔۔۔۔ زارا مظہر

زارا مظہر
بہت دنوں سے
 میری ایک ادھوری نظم 
بند وَرقَوں میں 
سو رہی ہے 
کبھی ڈائری الٹنے پلٹنے سے 
ہڑبڑا کر اٹھ جاتی ہے 
موندھی موندھی آ نکھوں سے
میری جانب ۔۔۔۔۔
تَکتی ہے ۔۔۔۔۔۔ بس تَکتی ہے 
میرےاِرتکاز کا لمس 
اپنے بے ترتیب حلیے پر 
پا کر ۔۔۔۔۔
شرماتی ہے ۔۔۔۔ پھر جھنجھلاتی ہے 
اور انگڑائی لے کر جاگ جاتی ہے 
 لڑتی ہے ، جھگڑتی ہے ۔۔۔۔
  اپنی تکمیل چاہتی ہے ۔۔۔۔  
میرے من میں جوار بھاٹے ابلتے ہیں 
کشمکش کے کچھ رنگ مچلتے ہیں
مگر جو غم مجھے اسکے پَلّو میں باندھنا ہے 
میری جرآت کا دامن اس سے خالی ہے 
میرے دماغ میں حروف کی آ ندھی چلتی ہے 
گرد باد بنتے ہیں ، گھومتے ہیں 
  بگولہ ۔۔۔۔ بن کے بھاگتے ہیں
 ریگزاروں میں ، کہساروں  میں 
صحراؤں میں ، سرابوں میں ۔۔۔
بَن میں ، بیابانوں میں ۔۔۔۔ 
پہاڑ کی چوٹی پر ، کسی گھاٹی میں 
مگر تھک جاتی ہوں
تو لوٹ آ تی ہوں
وہ بھی تھک جاتی ہے 
میری انگلیوں میں دبے دبے ۔۔۔
نِراسی ، بے آ سی ہو جاتی ہے 
ناراض سی ۔۔۔ چپ  ورقوں کی رِدا اوڑھ لیتی ہے 
اور لرزتی پلکوں  سے
آ ب دار موتیوں کی 
لَو پھڑپھڑاتی ہے ، سایۂ دیوار بناتی ہے 
موم گرتی ہے رات بھر ۔۔۔۔
قطرہ قطرہ ۔۔۔۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں