ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

اتوار، 17 جولائی، 2016

دن بھرا دھوپ کا سپنوں سے سجے ہیں بادل / شام جب آئے تو منظر کو سجائے اترے /انور زاہدی

انور زاہدی
پھر ہوئی شام تو دیوار سے سائے اترے
وہ مجھے دیکھنے پھر بام سے آئے اترے
کون کرتا ہے کسے یاد محبت نہ ہو گر
آئے ملنا ہے جسے آنکھوں میں آئے اترے
دن رہا دھوپ کے میدان میں صحرا جیسے
شام آئے تو گھٹا کی طرح چھائے اترے
دن بھرا دھوپ کا سپنوں سے سجے ہیں بادل
شام جب آئے تو منظر کو سجائے اترے
سرمئی شام میں انور ہے تری یاد ہوا
رات جب آئے چراغوں کو جلائے اترے

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں