ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے
اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


بدھ، 28 اکتوبر، 2015

دست دعا دیکھے [ایک نظم] انور زاہدی

انور زاہدی
کبھی تتلی کے پر 
شمع کی لو میں 
خاکستر دیکھے
جنُون عشق میں 
کیا طائر شب کو 
کبھی دم توڑتے دیکھا
کسی درگاہ کے در پہ
چھلکتے آنسووں کو آنکھ میں 
اور کانپتے دست دعا دیکھے
سڑک پر گُم کبھی 
جیسے بگُولہ ہو
کسی پاگل کو اپنی دھُن میں
محو رقص بھی دیکھا
برستے مینہ کی بوچھار میں
بارش کے قطرے کو
زمیں کی خاک میں پیوند ہوتے
زندگی درگور بھی دیکھی
کبھی ساون میں 

گھر جلتا ہوا دیکھا
کبھی کیا فصل گُل میں 
پیڑ دیکھے جو برہنہ ہوں
کبھی سر کو چھپانے کے لئے
بس سائیباں کی حسرت آزردہ
لے کے اپنی آنکھوں میں 
کسی بے گھر کو بھی دیکھا
دھڑکتے دل کو چاہت میں 
کبھی رُکتے ہوئے دیکھا
انور زاہدی

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں