ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

سوموار، 17 اگست، 2015

تیرا چہرہ ہے یا ہے آئینہ : انور زاہدی


آخر شب میں پھر ہوا کیا ہے
کوئ تارہ فلک سے ٹوٹا ہے
شہر گلیاں مکان سب خاموش
جیسے آسیب کوئ اُترا ہے
 تیرا چہرہ ہے یا ہے آئینہ
جب بھی دیکھا ہے دن نکلتا ہے
ایک گھر مُنتظر ہے جو شاید
رات دن اک دیا سا جلتا ہے
آخری پہر ہو گیا شب کا
کوئ آتا ہے ایک سائہ ہے
کوئ تعویز اس بلا کے لئے
روگ یہ عشق کا لگا کیا ہے
چھپ گیا آسمان بادل میں
چاند پھر بھی کہیں نکلتا ہے
پاس جو بھی تھا کر دیا قربان
دیکھنے کو بھلا بچا کیا ہے
ایک آواز سُن سکو گر تم
کس طرح میرا دل دھڑکتا ہے


کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں