اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


اتوار، 19 اپریل، 2015

منظرِ وقت کی یکسانی میں بیٹھا ہوا ہوں ۔۔ اعجاز گل

اعجاز گل

منظرِ        وقت          کی        یکسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
رات     دن        ایک     سی        ویرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
رہگزر     ہے        نہ        کوئی      تازہ      مسافت         در      پیش
مطمئن        بے      سر     و     سامانی     میں    بیٹھا     ہوا    ہوں
مرحلہ      طے      نہ       ہوا          کام        کی       دشواری       کا          
بسکہ         آغاز           کی          آسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
غم     کے      ہونے      تو     مسرّت     کے     نہیں      ہونے      سے     
وجہ            در          وجہ          پریشانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
کل     کہیں      رفتہ    میں   تھا     حال   کی   حیرت     کا      اسیر            
کسی      فردا       کی       حیرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں 
خیر             ہمزاد              مرا           دور            تماشائی         ہے
شر      ہوں      اور      فطرتِ      انسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
جسم        ہوں         اور      نفس       ٹھہرا      ہے      ضامن     میرا  
ساعتِ          عمر         کی         نگرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
ایک         بازارِ        طلسمات        ہے         جس        کے          اندر
جیبِ           خالی          تری         ارزانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
تُو         کہ      ہے        ریگ     گہر      بار      سمندر       سا      مَیں
تیرے          پانی         کی          فراوانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں