ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے
اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


جمعرات، 30 اپریل، 2015

دل ِآباد کا برباد بھی ہونا ضروری ہے ۔۔ شعیب بن عزیز

شعیب بن عزیز
دل ِآباد کا برباد بھی ہونا ضروری ہے
جسے پانا ضروری ہے، اسے کھونا ضروری ہے
مکمل کس طرح ہوگا تماشہ برق و باراں کا
ترا ہنسنا ضروری ہے مرا رونا ضروری ہے
بہت سی سرخ آنکھیں شہر میں اچھی نہیں لگتیں
ترے جاگے ہوؤں کا دیر تک سونا ضروری ہے
کسی کی یاد سے اِس عُمر میں دِل کی مُلاقاتیں
ٹھٹھرتی شام میں اِک دُھوپ کا کونا ضروری ہے
یہ خود سر وقت لے جائے کہانی کو کہاں جانے
مصنف کا کسی کردار میں ہونا ضروری ہے
جناب ِ دل بہت نازاں نہ ہوں داغ ِ محبت پر
یہ دنیا ہے یہاں یہ داغ بھی دھونا ضروری ہے

منگل، 28 اپریل، 2015

ساھیوال میں ایم اے اشرف کی کتاب ،، تاریخ ساھیوال ،، کی تقریبِ رونمائی(رپورٹ علی وارث انصاری)

رپورٹ : علی وارث انصاری
ایم اے اشرف مرحوم کی  کتاب "تاریخ ساہیوال قدیم اور جدید خطوط کی روشنی میں" کی تقریب رونمائی  آرٹس کونسل جناح ہال میں پنجاب لوک سجاگ 
مجید امجد اکیڈیمی ،پنجاب لوک رھس اور ساھیوال آرٹس کونسل   کے زیرِ اھتمام منعقد ہوئی ۔
کتاب میں  ہڑپہ کی تاریخ، منٹگمری سے ساہیوال تک کا سفر، ساہیوال کی تہذیب، انگریز کا زمانہ، ساہیوال کے آبی ذرائع، قومیں، سماجی و سیاسی اداروں اور حلقوں پر تاریخی لحاظ سے روشنی ڈالی گئی ہے۔
تقریب کے مہمان خصوصی معروف ڈاکٹر 

پروفیسر مبارک علی نے کہا کہ تاریخ ساہیوال تاریخی حوالے سے ایک منفرد کتاب کی حیثیت رکھتی ہے جو کہ بڑے شہروں کی تاریخ رقم کرنے کی روایت کی نفی کرتی نظر آتی ہے۔
'ایم اے اشرف ایسا سپوت ہے جس رائج اطوار سے انحراف کرتے ہوئے ایک چھوٹے شہر کو اپنی توجہ کا مرکز بنانے کی ہمت کی۔'
سیاسی و سماجی تجزیہ کار ڈاکٹر پروفیسر مہدی حسن کے مطابق تاریخ ساہیوال میں ایم اے اشرف نے تاریخ کو اس کے درست سیاق و سباق کے ساتھ بیان کیا ہے اور اسے مشرق وسطی سے جوڑنے کی بجائے اس کی پانچ ہزار سالہ تاریخ کی شکل بگاڑنے بنا اسے پورے انصاف کیساتھ عوام تک پہنچایا گیا ہے۔
'تاریخ ساہیوال باقی شہروں کی ادبی شخصیات کے لیے عملی نمونہ اور مثال کی حیثیت رکھتی ہے جو کہ پاکستان میں چھوٹے شہروں کی علاقائی تاریخ کھوجنے اور محفوظ کرنے کی روایت کا سنگ بنیاد ثابت ہونے کی پوری قابلیت رکھتی ہے۔'
مہدی حسن نے کہا کہ تاریخ ساہیوال ایک قابل اعتماد کتاب ہے کیونکہ اس کے مصنف نے اپنی ذاتی رائے کو ثانوی اہمیت دیتے ہوئے ضروری شواہد اور ثبوتوں پر زیادہ زور دیا ہے۔

ڈاکٹر پروفیسر محمد رفیق مغل ستارہ امتیاز کا کہنا تھا کہ بلاشبہ تاریخ ساہیوال کو انسائیکلوپیڈیا کہا جا سکتا ہے کیونکہ مصنف نے اس میں ساہیوال کو ہر پہلو کو پوری ایمانداری کے ساتھ بیان کر دیا ہے۔

'اس کتاب میں ان حقائق کو بھی ڈھونڈ کر لوگوں کے سامنے لا کھڑا کیا ہے جس سے لوگ اس سے پہلے روشناس نہ تھے۔
سید نعیم اختر نقوی نے ابتدا میں ایم اے اشرف سے اپنے تعلق اورخاص طور پر راو شفیق احمد اور رضاالحق صدیقی اور 
دیگر دوستوں کا ذکر کرتے ہوئے ساھیوال کی ادبی تاریخ کو تفصیل سے بیان کیا۔
ان کے بعد پوسٹ گریجویٹ کالج کے پرنسپل پروفیسر اخلاق احمد نے بھی موصوف کی شخصیت اور فن کے حوالے سے خراجِ عقیدت پیش کیا۔راقم الحروف(علی وارث انصاری) نے تقریب کی نظامت کے فرائض انجام دئیے۔
تقریب رونمائی میں ایم اے اشرف کی کاوشوں کا اعتراف کرتے ہوئے ان کے بیٹے ندیم اشرف کو اعترافی شیلڈ بھی پیش کی 

گئی۔
ایم اے اشرف کی کتاب پنجاب لوک سجاگ کے تعاون سے چھاپی گئی ہے ۔ تقریب رونمائی کا آغاز دن دو بجے ہوا جس میں پنجاب لوک سجاگ کی جانب سے ایم اشرف کی کتابٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍٍ "تاریخ ساہیوال" کا سٹال بھی لگایا گیا تھا۔
تقریب میں صوبائی وزیر عشر و زکوۃ ملک ندیم کامران، عالمی شہرت یافتہ تاریخ دان ڈاکٹر مبارک علی، نامور دانشور ڈاکٹر مہدی حسن، ماہر آثار قدیمہ رفیق مغل، سابق ایم پی اے حفیظ اختر،ایڈیشنل کمشنر مرزا شفقت، انسان دوست ایسوسی ایشن، عمل فاؤنڈیشن، ڈسٹرکٹ بار ایسوسی ایشن، ڈویژن بھر کے ادبی، سیاسی، صحافی و سماجی حلقوں سے تعلق رکھنے والی
شخصیات، طلبا و طالبات اور مختلف پیشہ ورانہ تنظیموں کے نمائندوں نے شرکت کی۔

سوموار، 27 اپریل، 2015

اپنی اَنا پہ تجهہ کو مان بہت تها وقار ۔۔ وقار زیدی

وقار زیدی
گل برسائے میں نے مِہر، وفائوں کے
اُس نے تیر چلائے جَور، جفائوں کے
دنیا کی دولت سے ہم کو غرض نہیں
طالب ہیں ہم صرف تمھاری دعا ئوں کے
راہِ طلب میں زخمی ہوں ، واری جائیں
پھول کھلیں یارب اپنی آشائوں کے 
قید ہیں میری آنکهوں میں اک مدت سے
دلکش دل کش منظر میرے گائوں کے
دل میں ہے میرے ٹم ٹم کرتا ایک چراغ 
رخ پهیرے اِس نے ہیں تند ہوائوں کے
سایہ دار درخت تهے ماں اور باپ مر ے
زندہ ہوں میں صدقے اُن کی دعائوں کے
اُس کی زلف نے مجهہ کو بهی زنجیر کیا
چُنگل سے نکلا ہے کون بلائوں کے
اپنی اَنا پہ تجهہ کو مان بہت تها وقار
لُوٹا کس نے بل بوتے پہ ادائوں کے

ہفتہ، 25 اپریل، 2015

بارشوں میں رقص کرتی زندگی کا نام ہے (نظم) ۔۔۔۔ انور زاہدی

انور زاہدی

زندگی صحرا میں رخشاں چاندنی کا نام ہے
کو ہ پر بادل ندی میں پانیوں کا نام ہے
زندگی طوفان 'خاک اور دشت میں پانی کی چاہ
بارشوں میں رقص کرتی زندگی کا نام ہے
زندگی ہے قیس کی آنکھوں میں وحشت اور جذب
زندگی لیلی کے جسم و جاں میں مجنوں نام ہے
وسط صحرا پیاس اور اک حوصلہ ہے زندگی
زندگی شام غریباں میں دھو ئیں کا نام ہے
زندگی فرہاد کا تیشہ 'جنُوں اور سنگ کوہ
زندگی شیریں کے حُسن بےبہا کا نام ہے
زندگی ہے ہیر کی بیچارگی اور زہر عشق
بانسری کی دُھن پہ رانجھا کی لگن کا نام ہے
اک وجودی فلسفے کے دائرے میں زندگی
اور محور میں ہیں ہم جس زندگی کا نام ہے
زندگی ہجر و فراق و وصل کے ہیں مرحلے
زندگی نان جویں کی جُستجو کا نام ہے
زندگی اک مشکبُو شام و سحر ہے تیری یاد
زندگی ہوتی طلوع صبح نو کا نام ہے
زندگی تاریکی شب میں بقائے زندگی
زندگی روشن سے دن میں زندگی کا نام ہے
صبح کرنا شام کا ہے زندگی کا یک روپ
رات میں اختر شماری زندگی کا نام ہے
زندگی لاچارگی میں رنگ عزم زندگی
عشق قائم عشق دائم زندگی کا نام ہے
زندگی ہے آکسیجن جاں بلب سانسوں کے نام
صحن گُلشن میں مہکتی زندگی کا نام ہے
زندگی ہوں میں اگر تو بیکراں ہے زندگی
زندگی بس اس من و تُو کا ہی اصلی نام ہے

اتوار، 19 اپریل، 2015

منظرِ وقت کی یکسانی میں بیٹھا ہوا ہوں ۔۔ اعجاز گل

اعجاز گل

منظرِ        وقت          کی        یکسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
رات     دن        ایک     سی        ویرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
رہگزر     ہے        نہ        کوئی      تازہ      مسافت         در      پیش
مطمئن        بے      سر     و     سامانی     میں    بیٹھا     ہوا    ہوں
مرحلہ      طے      نہ       ہوا          کام        کی       دشواری       کا          
بسکہ         آغاز           کی          آسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
غم     کے      ہونے      تو     مسرّت     کے     نہیں      ہونے      سے     
وجہ            در          وجہ          پریشانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
کل     کہیں      رفتہ    میں   تھا     حال   کی   حیرت     کا      اسیر            
کسی      فردا       کی       حیرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں 
خیر             ہمزاد              مرا           دور            تماشائی         ہے
شر      ہوں      اور      فطرتِ      انسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
جسم        ہوں         اور      نفس       ٹھہرا      ہے      ضامن     میرا  
ساعتِ          عمر         کی         نگرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
ایک         بازارِ        طلسمات        ہے         جس        کے          اندر
جیبِ           خالی          تری         ارزانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
تُو         کہ      ہے        ریگ     گہر      بار      سمندر       سا      مَیں
تیرے          پانی         کی          فراوانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں

ہفتہ، 18 اپریل، 2015

جسم ہوں اور نفس ٹھہرا ہے ضامن میرا ۔۔ اعجاز گل

اعجاز گل
منظرِ        وقت          کی        یکسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
رات     دن        ایک     سی        ویرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
 راہگزر     کوئی     نہ      منزل      کا      سفر      ہے       در      پیش
مطمئن     بے        سر     و      سامانی     میں    بیٹھا     ہوا    ہوں
 مرحلہ       طے      نہ        ہوا        کام        کی       دشواری       کا          بسکہ        آغاز            کی          آسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
 غم     کے    ہونے    سے     مسرّت     کے     نہیں      ہونے      سے   
وجہ            در          وجہ          پریشانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
 کل     کہیں      رفتہ    میں   تھا     حال   کی   حیرت     کا      اسیر           
اب    کسی      فردا       کی       حیرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں 
 خیر             ہمزاد              مرا           دور            تماشائی         ہے
شر      ہوں      اور      فطرتِ      انسانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
 جسم        ہوں         اور      نفس       ٹھہرا      ہے      ضامن     میرا    
ان     مہ     و    سال      کی        نگرانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں
 ایک         بازارِ        طلسمات        ہے         جس        کے          اندر
جیب           خالی        تیری         ارزانی     میں    بیٹھا    ہوا    ہوں

جمعہ، 10 اپریل، 2015

فصل گُل آئے چمن لہکیں کھلیں گُل ہر سُو ۔۔ انور زاہدی

دُکھ کی تفہیم ہے کیا درد کسے کہتے ہیں
پوچھو اُن سے جو شب و روز یہی سہتے ہیں
 ریگ صحرا میں بسیں پینے کو پانی نہ ملے
خواب میں دریا ہیں پینے کو پر ترستے ہیں
 فصل گُل آئے چمن لہکیں کھلیں گُل ہر سُو
ہیں قفس میں جو بہاروں کو نہیں تکتے ہیں
 بھری برسات میں بادل کا برسنا معمول
وسط صحرا میں بھی بادل کبھی برستے ہیں
چاند تاروں سے سجے عرش کا جادو کیسا
ہم زمیں زاد ہیں پر عرش کو سمجھتے ہیں
 ابن آدم ہوں مگر میرا مقدر انور
اب ملائک بھی نصیبوں پہ رشک کرتے ہیں