ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے
اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


جمعہ، 17 اکتوبر، 2014

کاغذ پہ کیسے ٹھہریں مصرعے مری غزل کے ۔۔ اسلم کولسری

اسلم کولسری
ھر چند بے نوا ھے کورے گھڑے کا پانی
دیوان میر کا ھے ، کورے گھڑے کا پانی
اپلوں کی آگ اب تک ھاتھوں سے جھانکتی ھے
آنکھوں میں جاگتا ھے کورے گھڑے کا پانی
جب مانگتے ھیں سارے انگور کے شرارے
اپنی یہی صدا ھے کورے گھڑے کا پانی
کاغذ پہ کیسے ٹھہریں مصرعے مری غزل کے
لفظوں میں بہہ رھا ھے کورے گھڑے کا پانی
خانہ بدوش چھوری، تکتی ہے چوری چوری
اس کا تو آئنہ ہے کورے گھڑے کا پانی
چڑیوں سی چہچہائیں ، پنگھٹ پہ جب بھی سکھیاں
چپ چاپ رو دیا ہے کورے گھڑے کا پانی
اس کے لہو میں شاید، تاثیر ہو وفا کی 
جس نے کبھی پیا ہے کورے گھڑے کا پانی
عزت ، ضمیر ، محنت ، دانش ، ہنر ، محبت
لیکن کبھی بکا ہے کورے گھڑے کا پانی؟
دیکھوں جو چاندنی میں ، لگتا ہے مجھ کو اسلم
پگھلی ہوئی دعا ہے کورے گھڑے کا پانی

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں