ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

سوموار، 15 ستمبر، 2014

اٹھایا اس نے چلّو میں تو دریا مختصر سا تھا ۔۔ عارف امام

عارف امام
بڑا دورانیہ تھا اور تماشہ مختصر سا تھا
مرا اتنا سا قِصّہ ہے کہ قِصّہ مختصر سا تھا
بس اک مٹی کی چادر تھی بدن کو جو میسر تھی
میں جب رخصت ہوا، میرا لبادہ مختصر سا تھا
زیادہ تھیں مری سانسیں، مگر اعمال تھوڑے تھے
بڑا تھا میرا گھر لیکن اثاثہ مختصر سا تھا
مرے خاکسترِ جاں سے ہَوا اٹھلا کے کہتی تھی
تجھے جس نے جلایا وہ شرارہ مختصر سا تھا
کسی مہتاب نے اپنے جلو میں لے لیا ورنہ
مرے برجِ مقدر کا ستارہ مختصر سا تھا
نظر اکب بار لپکی تھی، پلک اک بار جھپکی تھی
بڑی تفصیلی دعوت تھی، اشارہ مختصر سا تھا
قصیدہ لے کے میں دربار میں پہنچا تو کیا دیکھا
مرا طول سخن سارے کا سارا مختصر سا تھا
چھلک اٹّھا خجالت سے، سمٹ آیا ندامت سے
اٹھایا اس نے چلّو میں تو دریا مختصر سا تھا

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں