ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

سوموار، 4 اگست، 2014

کشید ہوتا خسارہ نہیں خسارے سے ۔۔ اعجاز گل

اعجاز گل
رجوع      جب     بھی    کیا     عشق     کے      سپارے     سے
  قیام        ہجر         کا         نکلا       ہے          استخارے     سے
   جدائیوں      کا     سبب      بھی       ہے      خاک       پر     پانی
ملا       رہا       ہے        کنارا         بھی      یہ       کنارے     سے
اُڑائے      پھرتا      ہوں      خود       کو       مگر        ہے     اندازہ
کہ    گھٹ    رہی    ہے      ہَوا     بھی     مرے     غبارے     سے
          کہاں     کا    سود     کہ     اس     عمرِ    سودمند    سے    اب
    کشید          ہوتا         خسارہ        نہیں          خسارے     سے
 کیا       گیا     تھا       جسے      طے       پھلانگ      کر  ،    زینہ 
 ٹھہر     ٹھہر      کے      اترتا      ہوں       اب      سہارے     سے
 ہوا          نہیں          ابھی          انکارِ          مدّعا    ،      شاید
الجھ       رہا        ہے        وہ        ہشیار         استعارے     سے 
 پتا       بتایا      ہے      سردی      نے       اپنی      شدّت       کا
پڑھا    ہے    درجہ    حرارت    کا     مَیں     نے      پارے     سے
 زمین      ہوتی    ہے     گردش     سے     رات      میں     تبدیل
تو      آفتاب          بدلتا        ہے           چاند          تارے     سے

1 تبصرہ:

  1. Kia kehney...Aejaz Gul sb...اُڑائے پھرتا ہوں خود کو مگر ہے اندازہ
    کہ گھٹ رہی ہے ہَوا بھی مرے غبارے سے....akram zahid

    جواب دیںحذف کریں