اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV


جمعرات، 26 جون، 2014

چراغ داغ ہوئے، روزن سحر نہ کھلا ۔۔ اسلم کولسری

اسلم کولسری
خیال خام تھا یا نقش معتبر، نہ کھلا
دلوں پہ اس کا تبسم کھلا، مگر، نہ کھلا
محیط چشم تمنا بھی تھا وہی، جس پر
کسی طرح بھی مرا نقطہ نظر نہ کھلا
عجیب وضع سے بے اعتباریاں پھیلیں
غریب شہر کی دستک پہ کوئی در نہ کھلا
نہیں کہ خندہء مفلس ہےباب شنوائی
کبھی کھلے گ اگر مدعی کا سر نہ کھلا
قدم قبول ہوئے، راستوں کی دہول ہوئے
سفر تمام ہوا، مقصد سفر نہ کھلا
بڑی طویل کہانی ہے دل کے بجھنے کی
کہ ایک شخص تھا اور قصہ مختصر، نہ کھلا
متاع شب تھے، سو، اسلم فگار آنکھوں کے
چراغ داغ ہوئے، روزن سحر نہ کھلا

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں