ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

جمعرات، 12 جون، 2014

کہاں ہو تم؟ ۔۔ عارفه شہزاد

عارفہ شہزاد

اگر ہم لفظ ہوتے تو
یہ سارے لوگ خود ہم کو
حسیں جملوں کی مالا میں پرو دیتے
کبھی ہم نظم کے مصرعوں میں ڈھلتے
یا غزل کا شعرہو جاتے
سبھی سے داد تو پاتے!
اگر ہوتے جو ہم سرگم کے دو میٹھے سریلے سر...
خوشی کے راگ میں ڈھل کر
سماعت میں ...
مدھر سا رس تو ٹپکاتے!
اگر ساگر کی ہوتے لہر ہم
اٹھکیلیاں کرتے ہواؤں سے
مبرا ہو گۓ ہوتے
ہر اک تعزیر سے، ساری خطاؤں سے
کبھی ہم تم...
شرارت سے بہم مل کر...
بہت سی سیپیاں ساحل په بکھراتے
اڑاتے جھاگ بے فکری سے...
مل کر شور کرتے
اور لپٹ کر ایک دوجے سے
کسی انجان ساحل تک بھی ہو آتے
سراغ زندگی پاتے!
مگر ہم کون ہیں؟
اور کیوں بھٹکتے پھر رہےہیں 
اس گھنے جنگل میں یوں گم سم
یہاں میں ہوں ...
کہاں ہو تم؟؟؟

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں