ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

اتوار، 4 مئی، 2014

غزل ۔۔ نصیر احمد ناصر

نصیر احمد ناصر
بادل ہیں کہیں اور نہ اشجار نمایاں
منظر میں پرندوں کی ہے اک ڈار نمایاں
اس خوابِ تمنا سے گزر جانا ہی اچّھا
پھرتی ہے یہاں وحشتِ بیدار نمایاں
ہم اہلِ محبت ہیں فقط پیار کریں گے
تیروں کی نمائش ہو کہ تلوار نمایاں
ہر لمحہ کسی طالبِ خود کش کی طرح ہے
ہر لمحہ کسی مرگ کے آثار نمایاں
ٹک دیکھتے رہتے ہیں در و بام، دریچے
تقسیم میں ہو جاتی ہے دیوار نمایاں
اس بار علامت ہے نہ ہے متن میں ابہام
اس بار کہانی کے ہیں کردار نمایاں
ان کو بھی کسی کارِ محبت پہ لگا دو
کچھ لوگ یہاں پھرتے ہیں بیکار نمایاں

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں