ادبستان اور تخلیقات کے مدیرِاعلیٰ رضاالحق صدیقی کا سفرنامہ، دیکھا تیرا امریکہ،،بک کارنر،شو روم،بالمقابل اقبال لائبریری،بک سٹریٹ جہلم پاکستان سے شائع ہو گیا ہے،جسے bookcornershow room@gmail.comپر میل کر کے حاصل کیا جا سکتا ہے

اردو کے پہلے لائیو ویب ٹی وی ،،ادبستان،،کے فیس بک پیج کو لائیک کر کے ادب کے فروغ میں ہماری مدد کریں۔ادبستان گذشتہ پانچ سال سے نشریات جاری رکھے ہوئے ہے۔https://www.facebook.com/adbistan


ADBISTAN TV

منگل، 13 مئی، 2014

غزل ۔۔ رحمان فارس


عشق سچا ہےتو کیوں ڈرتے جھجکتے جاویں
آگ میں بھی وہ بُلائے تو لپکتے جاویں 
کیا ہی اچھاہو کہ گِریہ بھی چلے ، سجدہ بھی
میرے آنسو ترے پیروں پہ ٹپکتے جاویں 
تُو تو نعمت ہے سو شُکرانہ یہی ہےتیرا
پلکیں جھپکائے بنا ہم تجھے تکتے جاویں
دم ہی لینے نہیں دیتے ہیں خدوخال ترے
دم بہ دم اور ذرا اور دمکتے جاویں ۔۔۔
توڑنے والے کسی ہاتھ کی اُمید پہ ہم
کب تلک شاخِ غمِ ہجر پہ پکتے جاویں ؟
شیرخواروں کے سے بےبس ہیں ترے عشق میں ہم
بول تو سکتے نہیں ، روتے بلکتے جاویں 
اب تو ٹھہرا ہےیہی کام ہمارا شب و روز
دُور سے دیکھیں تجھے اور بہکتے جاویں 
عشق زادوں سے گذارش ہےکہ جاری رہے عشق
بَکنے والوں کو تو بَکنا ھے ، سو بَکتے جاویں 
اُس کے رُخسار بھی شعلوں کی طرح ہیں ، یعنی
دہک اُٹھیں تو بہت دیر دہکتے جاویں 
فارس اک روز اِسی عطر سے مہکے گا وہ شخص
آپ چُپ چاپ فقط جان چھڑکتے جاویں 

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں